پاکستان

عمران خان کے خاص سیکرٹری اور شہباز شریف کے مشیر عون چوہدری کون ہیں ؟ چشم کشا حقائق منظر عامر پر

رائے شاہنواز لکھتے ہیں کہ” پاکستان میں اتحادی جماعتوں پر مشتمل نئی وفاقی کابینہ میں کچھ چہرے ایسے بھی ہیں جو سابق وزیراعظم عمران خان کی حکومت میں بھی رہ چکے ہیں۔ ان چہروں میں سابق وزیراعظم کے معتمد خاص سمجھے جانے والے عون چوہدری بھی شامل ہیں۔ عون چوہدری کو وزیراعظم شہباز شریف نے اپنا مشیر برائے امور نوجوانان مقرر کیا ہے۔

عون چوہدری کا سیاسی سفر خاصا دلچسپ اور کئی طرح کی ڈرامائی صورت حال سے بھرپور رہا ہے۔ ایک وقت تھا جب 2013 کے عام انتخابات کے بعد وزیراعظم عمران خان اپنی سیاسی جدوجہد کے فیصلہ کن موڑ میں داخل ہوئے تو اس سے پہلے اور بعد میں عون چوہدری وہ شخصیت تھے جو ان کے انتہائی قریب تھے۔ عمران خان کے نجی معاملات

تھے یا سیاسی عون چوہدری کے ذکر بغیر ادھورے تھے۔ اس بات کا عملی ثبوت سابق وزیراعظم کی گزشتہ دونوں شادیوں کے واقعات ہیں۔ جب عمران خان کی خاتون صحافی ریحام خان سے شادی کی خبریں باہر آئیں تو پہلے تردید اور پھر تصدیق کے لیے عون چوہدری ہی میدان میں پائے گئے۔ اسی طرح سابق وزیراعظم عمران خان کی جب جنوری 2018 میں بشریٰ بی بی کے ساتھ تیسری شادی کی تصاویر منظر عام پر آئیں تو ان میں بھی عون چوہدری موجود پائے گئے۔اسی اعتبار سے عون چوہدری کو سابق وزیراعظم عمران خان کا دست راست سمجھا جاتا تھا۔ 2018 میں جب عمران خان وزیراعظم بنے تو صورت حال یکسر بدل گئی۔ ایک طرف عمران خان نے بطور وزیر اعظم حلف اٹھایا تو دوسری طرف پاکستان کے کئی نیوز چینلز نے یہ خبر بھی نشر کی کہ عمران خان کے معتمد خاص عون چوہدری پر بنی گالہ کے دروازے بند کر دیے گے ہیں۔ البتہ یہ خبریں بھی نشر ہوئیں کہ عمران عون چوہدری کو پنجاب میں کوئی اہم عہدہ دینے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ عمران خان کے وزیراعظم بننے کے بعد عون چوہدری کے ساتھ وہ قربت تو نہیں رہی تاہم انہیں پنجاب میں

تحریک انصاف کی حکومت بننے کے بعد 18 ستمبر کو مشیر وزیراعلیٰ پنجاب کا منصب دے دیا گیا۔ صرف ایک سال بعد 13 ستمبر 2019 کو انہیں اس عہدے سے ہٹا دیا گیا۔ اس دوران ان کی وزیر اعظم عمران خان سے ایک ملاقات ہو پائی جس کی تصاویر انہوں نے اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ پر بھی جاری کیں۔ دسمبر 2020 میں عون چوہدری کو عثمان بزدار کا سیاسی معاملات پر رابطہ کار

مقرر کیا گیا۔ جب 2021 میں تحریک انصاف کے راہنما جہانگیر ترین کے خلاف ان کی اپنی حکومت نے مقدمات درج کیے تو عون چوہدری نے کھل کر جہانگیر ترین کی سپورٹ کی اور کوارڈینیٹر کے عہدے سے استعفے میں پارٹی سے ناراضگی کا اظہار کیا۔ اس کے بعد سے عون چوہدری جہانگیر ترین کے معتمد خاص سمجھے جا رہے ہیں۔ حال ہی میں عمران خان اور عثمان بزدار کے خلاف تحاریک عدم اعتماد رکوانے کے لیے تحریک انصاف کے راہنماؤں نے جہانگیر ترین سے عون چوہدری کے ذریعے ہی رابطہ کیا۔ عون چوہدری ایک اور حوالے سے بھی خبروں کی زینت بنتا رہا ہے وہ ان کا سابقہ پاکستانی اداکاہ نور بخاری سے شادی کرنا ہے۔ نور بخاری اپنے انسٹا پیج پر عون چوہدری اور اپنی بیٹی کی تصاویر اکثر شیئر کرتی رہتی ہیں۔ سیاسی تجزیہ نگاروں کے مطابق عون چوہدری کو شہباز شریف کا ایڈوائزر مقرر کیا جانا سابق وزیراعظم کے لیے ایک پیغام ہو سکتا ہے۔ اسی طرح جہانگیر ترین گروپ کو بھی ایک پیغام دیا گیا ہے کہ مخلوط وفاقی حکومت میں بھی اس گروپ کا اب باقاعدہ نمائندہ موجود ہے۔ عون چوہدری بنیادی طور پر لاہور کے علاقے جیون ہانہ سے تعلق رکھتے ہیں۔ ان کے ایک بھائی امین چوہدری نے تحریک انصاف کے ٹکٹ پر 2018 میں لاہور سے ایم پی اے کا الیکشن لڑا اور جیت اپنے نام کی تاہم اب ان کا شمار بھی تحریک انصاف کے ان منحرف اراکین میں ہوتا ہے جنہوں نے حمزہ شہباز کو وزیر اعلیٰ بننے میں مدد فراہم کی اور ووٹ دیا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button