اسلامک کارنر

خبردار! شوہر کو یہ جملہ بولنے والی عورت ضرور جہنم میں جائے گی

آپﷺ نے ارشاد فرمایا خواتین سے خطاب کیا کہ عورتیں جہنم میں مردوں سے زیاد ہ ہوں گی خواتین نے پوچھا کیوں؟اس حدیث میں تو نہیں دوسری حدیث میں آتا ہے کہ جنت میں بھی عورتیں زیادہ ہوں گی؟ یہ اس لئے کہ مردوں کو بھی آگاہ کیا جائے کہ حقوق کی ادائیگی پوری طرح سے کیا کرو مرد کے حقوق زیادہ نہیں ہیں جتنے حقوق عورت کے ہیں اتنے ہی مرد کے ہیں۔وجہ اس کی یہ ہے کہ خواتین کی آبادی ہی زیادہ ہوگی۔

تو ظاہر ہے ادھر بھی زیادہ تو ادھر بھی زیادہ تو پوچھا گیا وجہ کیا ہے تو فرمایا کہ شوہر کی نافرمانی کرتی ہو ناشکری کرتی ہو فرمایا ساری زندگی کھلاتا ہے پلاتا ہے آج کوئی مرد بیوی کو چھوڑ دے بے چاری کا کیا پرسان حال ہوتا ہے ہمارے معاشرے میں گھر اس کو لے کر دیتا ہے۔

اس کو تحفظ دیا اس کو چھت مہیا کی اس کی اولاد کا ہمیشہ کے لئے محافظ بنا اتنے بڑے بڑے انعامات احسانات اور نبی نے فرمایا کسی دن تھوڑی سی اونچ نیچ ہوجائے اس کی تنخواہ کم ہوگئی اب گوشت نہیں لا پارہا توریوں پر گزارا کروا رہا ہے ناشتے میں انڈے کا انتظام نہیں کرسکا آج بیگم بغیر ناشتے کے رہ لو آج کل حالات بڑے مشکل چل رہے ہیں یا چلو ناشتہ کر لو مگر انڈہ نا منگواؤ پڑاٹھے کی جگہ سادی روٹی استعمال کر لو تو نبی ﷺ نےفرمایا کبھی کچھ ہوجائے تو عورت طعنہ دیتی ہے ۔

میں نے کبھی بھی آپ سے خیر نہیں دیکھی میں اس گھر میں آئی ہوں مجھے ملا کیا ہے کتنی بڑی زندگی ہے اور مرد ان کے لئے اس تمام زندگی تحفظ تلاش کرتا ہے۔کیسے باپ اپنی بیٹے کے لئے رشتے تلاش کررہے ہوتے ہیں۔اور پھر طلاق سے ڈرتی بھی ہیں کہتی ہیں کہ طلاق دے کر مجھ پر ظلم کر دیا اس نے تو اتنا ہی کیا کہ اپنے سے جدا کر دیا اس کا مطلب یہ ہے کہ اگر وہ طلاق نہ دیتا تو اس کا احسان تھا تم پر ۔

اس کا احسان ہے کہ اس نے تم کو ٹھکانہ دیا ہوا ہے اور دینا غلط سمجھا جاتا ہے اس لئے کہ وہ جو تمام تحفظات اس نے دیئے ہوئے تھے وہ تم سے چھین لئے ہیں اور نقصان عورت کا ہی ہوتا ہے تو کتنی بڑی فضیلت ہے لیکن نبی ﷺ نے فرمایا کہ شوہر کی ناشکری کرتی ہیں اس سے صاف پتہ چلتا ہے کہ جب کسی کی خدمات زیادہ ہوں تو اسے برداشت کرو اور ناشکری مت کرو ان کا شکریہ ادا کرو

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button