اسلامک کارنر

وہ اسم اعظم جسے پڑھ کر دعا کی جائے تو تقدیر بدل جاتی ہے

دعا عبادات کی روح ہوتی ہے ۔لہذا عبادت کے بعد دعا پوری نیت اور خلوص سے کرنی چاہئے ۔اللہ کا فرمان ہے مجھ سے ہی مانگا کرو کیونکہ حاجت روا صرف اللہ تبارک تعالیٰ ہے۔مسئلہ یہ ہے کہ اکثر لوگ شکایت کرتے ہیں ان کی دعائیں قبول نہیں ہوتیں۔اس کا سبب یہ ہے کہ انکی دعا میں جذب پیدا نہیں ہوتا ،کھوٹ ہوتا ہے۔ہم لوگ خشوع اور اخلاص سے دعا نہیں مانگتے ۔اگر ہمارے اندر یقین پیدا ہوجائے کہ ہمارا خالق ہی ہمارا حاجت روا ہے تووہ ذات مالک القدوس ہماری دعاو¿ں پر ہمیں عطا کرتا ہے جو بن مانگے بھی عطا کردیتا ہے لیکن یہ اسکی حکمت پر منحصر ہے کہ کسی طالب کی حاجت کو کیسے پورا کرنا ہے۔

دعا اس لئے مانگنا بھی ضروری ہے کیونکہ مقدر اٹل ہے ،انسان کی تقدیر میں جو لکھا جاچکا ہے وہ اٹل ہے لیکن اللہ کاہم سب پر رحم یہ ہے کہ اس نے دعا سے تقدیر بدلنے کا وعدہ فرمارکھا ہے۔ جو لوگ سمجھتے ہیں کہ ان کی دعا سے معاملات کی سنگینی دور نہیں ہوتی ،عبادات کا صلہ نہیں مل رہا تو وہ دعا کا ایسا طریقہ اختیار کریں کہ اللہ اس بندے پر شفقت فرمانے پر راضی ہوجائیں ۔ بزرگان دین فرماتے ہیں کہ اللہ سے دعائیں مانگتے رہو اور اسکے ناموں کا وسیلہ بھی تلاش کرو۔اللہ کریم کے اسمائے مبارکہ یَاسَمِیع یَامُجِیبُ کو اکیالیس مرتبہ پوری توجہ سے نماز فجر کے بعد اوّل و آخر درود ابراہیمی 3 مرتبہ پڑھتے رہنے سے اللہ کریم بندے کی دعائیں قبول فرماتے ہیں

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button